Sunday

Mein To Maqtal Mein Bhi Qismat Ka Sikandar


Roman Urdu      رومن اردو

Mein To Maqtal Mein Bhi Qismat Ka Sikandar Nikla
Qurra e Faal Merrey Naam Ka Aksar Nikla

Tha Jinehin Zo’om Wo Darya B Mujhi Mein Doobey
Mein K Sehra Nazar Aata Thaa Sumandar Nikla

Mein Nay Iss Jaan e Baharan Ko Bahot Yaad Kia
Jab Koi Phool Meri Shaakh e Hunar Par Nikla

Shaher Walon Ki Mohabbat Ka Mien Qail Hoon Magar
Mein Nay Jiss Haath Ko Chooma Wohi Khanjar Nikla

Tu Yahein Haar Giya Hai Merrey Buzdil Dushman
Mujh Se Tanha K Muqabil Terra Lashkar Nikla

Mein Keh Sehraye e Mohabbat Ka Musafir Tha Faraz
Aik Jhonka Tha Keh Khushbu K Safar Par Nikla

Ahmed Faraz

Parveen Shakir

Urdu   اردو

میں تو مقتل میں بھی قسمت کا سکندر نکلا
قرعہ فال مرے نام کا اکثر نکلا

تھا جنہیں زعم وہ دریا بھی مجھی میں ڈوبے
میں کہ صحرا نظر آتا تھا سمندر نکلا

میں نے اس جانِ بہاراں کو بہت یاد کیا
جب کوئی پھول مری شاخِ ہنر پر نکلا

شہر والوں کی محبت کا میں قائل ہوں مگر
میں نے جس ہاتھ کو چوما وہی خنجر نکلا

تو یہیں ہار گیا مرے بزدل دشمن
مجھ سے تنہا کے مقابل ترا لشکر نکلا

میں کہ صحرائے محبت کا مسافر تھا فراز
ایک جھونکا تھا کہ خوشبو کے سفر پر نکلا


احمد فراز

No comments:

Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...