Thursday

Angrai Par Angrai Laiti Hai Raat Juddai Kie


Roman Urdu   رومن اردو

Angrai Par Angrai Laiti Hai Raat Juddai Kie
Tum Kiya Samjho, Tum Kiya Jano, Baat Merie Tanhai Kie

Koun Siahi Ghol Raha Hai, Waqt Kay Behtey Darya Mein
Mein Nay Aankh Jhukki Daikhi Hai, Aaj Kissi Harrjai Kie

Toot Gaye Siaal Naginey, Phoot Bahey Rukhsaaron Parr
Daikho Mera Saath Naa Daina, Baat Hai Yeh Ruswai Kee

Wassal Kee Raat Naa Janey Kion Israar Thaa Unko Janekaa
Waqt Se Pehley Doob Gaye,Taaron Nay Bari Danaai Kee

Urtey Urtey Aaas Ka Panchhi, Door Ufaq Mein Doob Giya
Rotey Rotey Baith Gai, Aawaz Kissi Soudai Kee

Qateel Shifai

Urdu     اردو

انگڑائی پر انگڑائی لیتی ہے رات جدائی کی
تم کیا سمجھو، تم کیا جانو، بات میری تنہائی کی

کون سیاہی گھول رہا ہے، وقت کے بہتے دریا میں
میں آنکھ جُھکی دیکھی ہے، آج کسی ہرجائی کی

ٹوٹ گئے سیال نگینے، پُھوٹ بہے رُخساروں پر
دیکھو میرا ساتھ نہ دینا، بات ہے یہ رسوائی کی

وصل کی رات نہ جانے کیوں اِصرار تھا اُن کو جانے کا
وقت سے پہلے ڈُوب گئے، تاروں نے بڑی دانائی کی

اُڑتے اُڑتے آس کا پنچھی، دور اُفق میں ڈُوب گیا
روتے روتے بیٹھ گئی، آواز کسی سودائی کی

Aamada e Fanna Hoon Kissi Aor Kay Laye


Roman Urdu    رومن اردو

Aamada e Fanna Hoon Kissi Aor Kay Laye
Hassti Ka Zawiya Hoon Kissi Aor Kay Laye

Ekk Shakhs Thaa Ko Sangg Samjhta Raha Mujhe
Laikin Mein Aaina Hoon Kissi Aor Kay Liye

Daikhey Mirrey Wajood Mein Manzar Jahan Kay
Jaam e Jahan Numma Hoo Kissi Aor Kay Liye

Khudd Ko To Daikhney Ki Bhi Furssat Nahin Mujhe
Parr Aankh Bann Giya Hoon Kissi Aor Kay Liye

Jabb Umer Ki Talash Mein Nikla To Yeh Khulla
Mein Umer Jee Raha Hoon Kissi Aor Kay Liye

Khudd Jall Raha Hoon Dhoop Mein Peepal Ki Shakal Mein
Saayaa Banna Hua Hoon Kissi Aor Kay Liye

Qadmon Kaa Ekk Hajoom Zamaney Kay Wastey
Khamosh Raastah Hoon Kissi Aor Kay Liye

Kion Khainchnay Laggay Hain Mujhe Habss Kay Muqeem
Mein Gosha e Hawa Hoon Kissi Aor Kay Liye

Manzil Tallak Hai Sirf Nigahon Kaa Faaslaa
Kabb Se Rukka Hua Hoon Kissi Aor Kay Liye

Ta’abeer Dhoondtaa Hoon Mein Apney Liyey Nadeem!
Aor Khawab Daikhta Hoon Kissi Aor Kay Liye

Sehan e Chaman Ko Dard Mirrie Aarzoo Rahi
Sehra Mein Khill Raha Hoon Kissi Aor Kay Liyey

Urdu    اردو

آمادہؑ فنا ہوں کسی اور کے لئے
ہستی کا زاویہ ہوں کسی اور کے لئے

اک شخص تھا کہ سنگ سمجھتا رہا مجھے
لیکن آیئنہ ہوں کسی اور کے لئے

دیکھے مرے وجود میں منظر جہان کے
جامِ جہاں نُما ہوں کسی اور کے لئے

خود کو تو دیکھنے کی بھی فُرصت نہیں مجھے
پر آنکھ بن گیا ہوں کسی اور کے لئے

جب عمر کی تلاش میں نکلا تو یہ کُھلا
میں عمر جی رہا ہوں کسی اور کے لئے

خود جل رہا ہوں دھوپ میں پیپل کی شکل میں
سایہ بنا ہوا ہوں کسی اور کے لئے

قدموں کا اک ہجوم زمانے کے واسطے
خاموش راستہ ہوں کسی اور کے لئے

کیوں کھینچنے لگے ہیں مجھے حبس کے مقیم
میں گوشہ ہوا ہوں کسی اور کے لئے

منزل تلک ہے صرف نگاہوں کا فاصلہ
کب سے رُکا ہوا ہوں کسی اور کے لئے

تعبیر ڈھونڈتا ہوں میں اپنے لئے ندیم!
اور خواب دیکھتا ہوں کسی اور کے لئے

صحنِ چمن کو درد مری آرزو رہی
صحرا میں کِھل رہا ہوں کسی اور کے لئے

Aakhri Khawahish

Roman Urdu    رومن اردو

Aakhri Khawahish

Mirrey Saathi!
Merie Yeh Rooh Merey Jism Sey Parwaz Karjaye
To Lout Aana!
Mirrei Be-Khawab Raaton Kay Azzabon Parr
Sissaktey Shaher Mein Tum Bhi

Zarra See Dair Ko Rukna
Mirrey Be-Noor Honton Kee Duaon Par
Tum Apni Sard Payshani Kaa Pathar Rakhh Karr Ro Daina
Bass Itni Baat Keh Daina
“Mujhey Tum Se Mohabbat Hai”

Urdu    اردو

مِرے ساتھی!
میری یہ روح میرے جسم سے پرواز کر جائے
تو لوٹ آنا!
مِری بے خواب راتوں کے عذابوں پر
سسکتے شہر میں تم بھی
ذرا سی دیر کو رُکنا
مِرے بے نُور ہونٹوں کی دعاوؑں پر
تم اپنی سرد پیشانی کا پتھر رکھ کر رو دینا
بس اتنی بات کہہ دینا
"مجھے تم سے محبت ہے"

Ajnabi See Rahon Kaa Ajnabi Mussafir


Roman Urdu             رومن اردو

Ajnabi See Rahon Kaa Ajnabi Mussafir
Mujh Sey Poochh Baitha Hai
Raastaa Batta Dogay!!
Ajnabi See Rahon Kay Ajnabi Mussafir…Sunn
Raastaah Koi Bhi Ho

Waastah Koi Bhi Ho
Manzilein Nahin Milltein
Manzilein To Dhooka Hain
Manzilein Jo Mill Jain
To Justjoo Nahin Rehtiee
Zindagi Ko Jeeney Ko Aarzoo Nahin Rehtee

Urdu             اردو

اجنبی سی راہوں کا اجنبی مسافر
مجھ سے پوچھ بیٹھا ہے
راستہ بتا دو گے!
اجنبی سی راہوں کے اجنبی مسافر۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ سُن
راستہ کوئی بھی ہو
واسطہ کوئی بھی ہو
منزلیں نہیں ملتی
منزلیں تو دھوکہ ہیں
منزلیں جو مل جایئں
تو جستجو نہیں رہتی
زندگی کو جینے کی آرزو نہیں رہتی۔۔۔۔۔۔۔۔

Ussey Yeh Koun Samjhaye

Roman Urdu    رومن اردو

Ussey Yeh Koun Samjhaye

Ajjab Pagal See Larki Hai!
Meree Khamosh Aankhon Mein
Mehkti, Muskurati, Gungunati, Khawab See Gehri Mohabbat Kay Sabhi Rangon Se Waqif Hai
Magar Anjaan Banti Hai

Woh Merie Beqarari Kay Sabhie Ma’ani Samjhti Hai
Magarr Khamoshh Rehti Hai
Ussey Maaloom Hai Yeh Bey Tahasha Bolney Wala!
Zaamaney Bharr Kay Qissey, Dastanein Uss Se Kehta Hai
Harr Ekk Mouzoo Par Uss Sey Baat Karta Hai
Wo Uss Say Keh Nahin Sakta
“Meri Sochon Kay Mehwar Ho
Tumharey Bin Mujhey Yeh Zindagi Bekaar Lagti Hai
Mera Harr Din Tumhari Soch Kay Suraj Se Uggta Hai
Merie Harr Shaam Kay Pehloo Mein Tum Hee Muskurrati Ho
Meri Harr Raat Karbb e Naarsaai Se Sullagti Hai
Agar Khud Sey Tumhein Minha Karon To Kuchh Nahin Bachta”
Ussey Maaloom Hai Ye Shabb Gaye Jagney Wala!
Jissey Khawabon Ki Duniya Se Mohabbat See Mohabbatt Hai
Wo Kion Soney Se Darta Hai
Ussey Kiya Khouf Laa-Haqq Hai
Wo Khull Kar Kion Nahin Hanstaa
Wo Kion Chhup Chhup Kay Rotaa Hai
Ussey Maaloom Hai Sub Kuchh
Magar Anjaan Banti Hai
Ussey Yeh Kon Samjhaye!!
Keh Dill Youn Naarsaai Ki Tappish Ziyada Dinon Takk Sahe Nahin Sakta
Jissey Khawabo_n Ki Duniya Se Mohabbat C Mohabbat Ho
Wo Khawabo_n Kay Binna Aisey Adhoora Rahe Nahien Sakta
Ussey Ye Koun Samjhaye Ke Uss Sey Be Tahashaa Bolney Wala!
Jo Harr Mouzoo Parr Uss Sey Baat Kartaa Hai
Kabhie Yeh Keh Nahien Sakta!
“Merri Weeran Aankhon Mein
Kai Sapney Sammo Jao
Tumharey Bin Adhoora Hoon
Merri Takmeel Ho Jao”
Ussey Maaloom Hai Sab Kuchh Magar Yeh Kon Samjhaye!
Ajjab Pagal See Larki Hai

Atif Saeed

Urdu     اردو

اُسے یہ کون سمجھائے

عجب پاگل سی لڑکی ہے!
مری خاموش آنکھوں میں
مہکتی، مسکراتی، گنگناتی، خواب سی گہری محبت کے سبھی رنگوں سے واقف ہے
مگر انجان بنتی ہے
وہ میری بے قراری کے سبھی معنی سمجھتی ہے
مگر خاموش رہتی ہے
اسے معلوم ہے یہ بے تحاشا بولنے والا!
زمانے بھر کے قصے، داستانیں اس سے کہتا ہے
ہراک موضوع پر اس سے بات کرتا ہے
وہ اس سے کہہ نہیں سکتا
"مری سوچوں کے محور ہو
تمہارے بن مجھے یہ زندگی بیکار لگتی ہے
مرا ہر دن تمہاری سوچ کے سورج سے اُگتا ہے
مری ہر شام کے پہلو میں تم ہی مُسکراتی ہو
مری ہر رات کربِ نارسائی سے سلگتی ہے
اگر خود سے تمہیں منہا کروں تو کچھ نہیں بچتا"
اسے معلوم ہے یہ شب گئے تک جاگنے والا!
جسے خوابوں کی دنیا سے محبت سی محبت ہے
وہ کیوں سونے سے ڈرتا ہے
اسے کیا خوف لاحق ہے
وہ کُھل کر کیوں نہیں ہنستا
وہ کیوں چُھپ چُھپ کے روتا ہے
اسے معلوم ہے سب کچھ
مگر انجان بنتی ہے
اسے یہ کون سمجائے!!
کہ دل یوں نارسائی کی تپش زیادہ دنوں تک سہہ نہیں سکتا
جسے خوابوں کی دنیا سے محبت سی محبت ہو
وہ خوابوں کے بنا ایسے ادھورا رہ نہیں سکتا
اسے یہ کون سمجھائے کہ اس سے بے تحاشا بولنے والا!
جو ہر موضوع پر اس سے بات کرتا ہے
کبھی یہ کہہ نہیں سکتا!
"مری ویران آنکھوں میں
کئی سپنے سمو جاوؑ
تمہارے بن ادھورا ہوں
مری تکمیل ہو جاوؑ"
اسے معلوم ہے سب کچھ مگر یہ کون سمجھاۓ!
عجب پاگل سی لڑکی ہے

عاطف سعید

Aisey Tooti Hoon Keh Chhooney Sey Bikhar Jaongee


Roman Urdu      رومن اردو

Aisey Tooti Hoon Keh Chhooney Sey Bikhar Jaongee
Abb Agar Aor Sattao Gay, To Mar Jaongee

Jo Sittam Karna Hai Kar Lijiye Hum Par Janan
Gham Ki Baarish Mein To Kuchh Aor Nikhar Jaongee

Kitney Dhokay Hain Ko Khudd Pey Yaqeen Jata Raha
Aisa Lagta Hai Keh Mein Sach Sey Mukkar Jaongee

Yeh Allag Baat Keh Naakaam Mohabbat Hoon Magar
Tum Sanawaro Jo Mujhko, To Sanwar Jaongee

Abb Mohabbat Kie Zaroorat Hai Naa Jeeney Mein Maza
Mujhko Jeeney Kee Dua Dogay, To Marr Jaongee

Urdu      اردو

ایسے ٹوٹی ہوں کہ چھونے سے بکھر جاونگی
اب اگر اور ستاو گے، تو مر جاونگی

جو ستم کرنا ہے کر لیجیئے ہم پر جاناں
غم کی بارش میں تو کچھ اور نکھر جاونگی

کتنے دھوکے ہیں کہ خود پہ یقین جاتا رہا
ایسا لگتا ہے کہ میں سچ سے مگر جاونگی

یہ الگ بات کہ ناکام محبت ہوں مگر
تم سنوارو گے جو مجھکو تو سنور جاونگی

اب محبت کی ضرورت ہے نہ جینے میں مزا
مجھکو جینے کی دعا دو گے تو مر جاونگی

Aisa Nahein Kay Hum Ko Mohabbat Nahin Milli

Roman Urdu             رومن اردو

Aisa Nahein Kay Hum Ko Mohabbat Nahin Milli
Tumhein Chahtey Thay, Par Terie Ulfat Nahin Milli

Milney Ko Zindagi Mein To Kai Hamsafar Milley
Parr Unn Kee Tabiat Sey Tabiat Nahin Milli

Chehron Mein Dosron Kay Tujhey Dhoondtey Rahey
Surrat Nahin Milli Kahein Seerat Nahin Milli

Bahot Dair Se Aaya To Merey Paas
Alfaaz Dhoondney Ki Bhi Mohllat Nahin Milli

Tujh Ko Gillah Hai Keh Tawajah Naah Dee Tujhey
Laikin Hum Ko To Khudd Apni Mohabbat Nahin Milli

Hum Ko To Teree Harr Aadat Achhi Laggi Faraz
Afsos Keh Tujh Se Meri Aadat Nahin Milli


Ahmed Faraz

Urdu           اردو

ایسا نہیں کے ہم کو محبت نہیں ملی
تمہیں چاہتے تھے، پر تیری الفت نہیں ملی

ملنے کو زندگی میں تو کئی ہمسفر ملے
پر اُن کی طبیعت سے طبیعت نہیں ملی

چہروں میں دوسروں کے تجھے ڈھونڈتے رہے
صورت نہیں ملی کہیں سیرت نہیں ملی

بہت دیر سے آیا تو میرے پاس
الفاظ ڈھونڈنے کی بھی مہلت نہیں ملی

تجھ کو گلہ ہے کہ توجہ نہ دی تجھے
لیکن ہم کو تو خود اپنی محبت نہیں ملی

ہم کو تو تیری ہر عادت اچھی لگی فراز
افسوس کہ تجھ سے میری عادت نہیں ملی

احمد فراز

Aisa Ho Sakta Hai Naa…?


Roman Urdu              رومن اردو

Aisa Ho Sakta Hai Naa…?
Keh Mein Nay Jaan Liya Ho
Tujhey Teri_e Zaat Ki Gehrai Takk
Terey Mehil Sey Lay Kar Tanhai Takk
Aisa Ho Sakta Hai Naa?

Key Mein Nay Bahot Karbb Saha Ho
Terey Sitam Se Lay Kar Teri Meesahi Takk
Aor Aisa Bhi To Ho Sakta Hai Naa?
Ko Tujhey Koi Dukhh No Ho
Merey Milney Sey Lay Kar Meri Juddai Takk
Haan Yaqeen Karo
Aisa Ho Sakta Hai Shaidd
Key Umer Bhar Kay Laye Kaafi Ho
Yeh Dukhh Ke Mein Nay Safar Kiya
Apni Zaat Se Lay Kar
Teri Zaat Ki Rassai Takk……!!

Urdu                اردو

ایسا ہو سکتا ہے نا؟
کہ میں نے جان لیا ہو
تجھے تیری ذات کی گہرائی تک
تیرے محل سے لے کر تنہائی تک
ایسا ہو سکتا ہے نا؟
کہ میں نے بہت کرب سہا ہو
تیرے ستم سے لے کر تیری مسیحائی تک
اور ایسا بھی تو ہوسکتا ہے نا؟
کہ تجھے کوئی دُکھ نہ ہو
میرے ملنے سے لے کر میری جدائی تک
ہاں یقین کرو
ایسا ہو سکتا ہے شائد
کہ عمر بھر کے لئے کافی ہو
یہ دُکھ کہ میں نے سفر کیا
اپنی ذات سے لے کر
تیری ذات کی رسائی تک۔۔۔۔۔۔۔!!

Aehed e Wafa Yaa Rasm e Mohabbat Kuchh Bhie To Hum Nibhaa Na Sakay


Roman Urdu       رومن اردو

Aehed e Wafa Yaa Rasm e Mohabbat, Kuchh Bhie To Hum Nibhaa Na Sakay
Jissey Chaha Uss Ko Paa Na Sakay, Jissey Payaa Uss Ko Chah Naa Sakay

Qatra Qatra Mehik Rahi Hai Teri Yaad Hamari Palkon Parr
Wo Chah Kay Dinn Wo Piyar Key Mousam, Kuchh Bhi To Hum Bhulla Na Sakay

Kiya Haar Likhon Kiya Jeet Likhon, Apni Qismat Ka Kiya Kehna
Log Kehtey Hain Jissey Sacha Ishq, Wo Sach Bhi Kabhi Hum Paa Na Sakay

Tum Merey Nahin Kissi Aor Key Ho, Yeh Baat Kabb Hallaq Se Utterie Hai
Hum Chah Kay Bhi Teri Ulfat Se, Daman Ko Apney Bacha Na Sakay

Yeh Ishq O Mohabbat Ki Batein Dost Hain Samjh Se Balatar
Keh Hum Inkaar e Muhabbat Kar Bhi, Izhaar e Muhabbat Chhuppa Na Sakay


Urdu             اردو

عہدِ وفا یا رسمِ محبت، کچھ بھی تو ہم نبھا نہ سکے
جسے چاہا اُس کو پا نہ سکے، جسے پایا اُس کو چاہ نہ سکے

قطرہ قطرہ مہک رہی ہے تیری یاد ہماری پلکوں پر
وہ چاہ کے دن وہ پیار کے موسم، کچھ بھی تو ہم بُھلا نہ سکے

کیا ہار لکھوں کیا جیت لکھوں، اپنی قسمت کا کیا کہنا
لوگ کہتے ہیں جسے سچا عشق، وہ سچ بھی کبھی ہم پا نہ سکے

تم میرے نہیں کسی اور کے ہو، یہ بات کب حلق سے اُتری ہے
ہم چاہ کے بھی تیری اُلفت سے، دامن کو اپنے بچا نہ سکے

یہ عشق و محبت کی باتیں دوست ہیں سمجھ سے بالاتر
کہ ہم انکارِ محبت کرکے بھی، اظہارِ محبت چُھپا نہ سکے

Agar Saahil Se Niklo Gay


Roman Urdu    رومن اردو

Agar Saahil Se Niklo Gay

Jo Tum Nay Thaan Hee Lee Hai
Hamarey Dill Se Niklo Gay….!
To Itna Jaan Lo Piyaray….
Sumandar Samney Hoga Agar Saahil Se Niklo Gay…!

Sittarey Jinn Ki Aankhon Nay Hamein Ekk Sathh Daikha Thaa
Gawahee Dainey Aaingay…!
Purraney Kaghazon Kie Balkoni Sey Bahot Lafz Jhankein Gay
Tumhein Wapas Bullain Gay…!
Kahein Wa’aday Khaabon Kie Tarah Rastay Mein Rokein Gay
Tumhein Daman Sey Pakrein Gay
Tumhari Jaan Khaingay…!
Chhuppa Kar Kiss Tarah Chehra
Bharri Mehfil Sey Niklo Gay….?
Zarra Phir Soch Laena Janan…!
Nikal To Jao Gay Shaid
Magar Mushkil Se Niklo Gay…!

Amjad Islam Amjad

Urdu     اردو

جو تم نے ٹھان ہی لی ہے
ہمارے دل سے نکلو گے۔۔۔!
تو اتنا جان لو پیارے۔۔۔۔۔
سمندر سامنے ہوگا اگر ساحل سے نکلو گے۔۔۔۔!
ستارے جن کی آنکھوں نے ہمیں اک ساتھ دکھا تھا
گواہی دینے آئیں گے۔۔۔۔!
پرانے کاغذوں کو بالکونی سے بہت لفظ جھانکیں گے
تمہیں واپس بُلائیں گے۔۔۔۔!
کہیں وعدے خوابوں کی طرح رستے میں روکیں گے
تمہیں دامن سے پکڑیں گے
تمہاری جان کھائیں گے۔۔۔!
چُھپا کر کس طرح چہرہ
بھری محفل سے نکلو گے۔۔۔۔؟
ذرا پھر سوچ لو جاناں۔۔۔۔!
نکل تو جاو گے شائد
مگر مشکل سے نکلو گے۔۔۔۔۔!

Agarr Kabhi Merie Yaad Aaye

Roman Urdu    رومن اردو

Agarr Kabhi Merie Yaad Aaye
To Chaand Raaton Kie Dilgeer Roshni Mein
Kissi Sittaray Ko Daikh Laina
Agar Wo Nakhal Falak Se Urr Kar Tumharey Qadmon Mein Aa Girey To Ye Jaan Lena
Wo Issta’arah Thaa Mere Dil Kaa
Agar Nah Aaye?............

Magarr Yeh Mumkin Hee Kiss Tarah Hai Ko Kissi Pe Nigah Dalo
To Uss Kie Deewar e Jaan Nah Tootey
Wo Apni Hastie Naa Bhool Jaye..!!
Agar Kabhi Meri Yaad Aaye
Guraiz Kartie Hawa Ki Lehron Pe Haath Rakhna
Mein Khushbuon Mein Tumhein Millon Gaa
Mujhey Gullabon Ki Pattion Mein Talash Karna
Mein Aows Qatra Kay Aainey Mein Tumhein Millon Gaa
Agar Sittaron, Aows Khushbuon Mein
Naa Pao Mujh Ko
To Apney Qadmon Mein Daikh Lenaa
Mein Gard Hotie Massafton Mein Tumhein Millongaa
Kahein Pe Roshan Charagh Daikho To Jaan Laina
Keh Harr Patangay Kay Sath Mein Bhie Sullag Chukka Hoon
Tum APney Hatho_n Sey Un Pattangon Kie Khak Darya Mein Daal Dena
Mein Khaak Bann Kar Sumandar Mein Safar Karo_n Gaa
Kissi Naa Daikhey Huey Jazeerey Pe Rukk Kay Tumhein Sadain Doonga
Sumandron Kay Safar Pe Niklo
To Uss Jazeerey Pe Kabhi Uttarna..!!

Amjad Islam Amjad

Urdu    اردو

اگر کبھی میری یاد آئے
تو چاند راتوں کی دلگیر روشنی میں
کسی ستارے کو دیکھ لینا
اگر وہ نخل فلک سے اڑ کر تمہارے قدموں میں آ گرے تو یہ جان لینا
وہ استعارہ تھا میرے دل کا
اگر نہ آئے ؟۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
مگر یہ ممکن ہی کس طرح ہے کہ کسی پر نگاہ ڈالو
تو اس کی دیوارِ جاں نہ ٹوٹے
وہ اپنی ہستی نہ بھول جائے۔۔!!
اگر کبھی میری یاد آئے۔۔
گریز کرتی ہوا کی لہروں پہ ھاتھ رکھنا
میں خوشبووں میں تمہیں ملوںگا
مجھے گلابوں کی پتیوں میں تلاش کرنا
میں اوس قطرہ کے آئینے میں تمہیں ملوںگا
اگر ستاروں میں، اوس خوشبووں میں
نہ پاو مجھ کو
تو اپنے قدموں میں دیکھ لینا
میں گرد ہوتی مسافتوں میں تمہیں ملوں گا
کہیں پہ روشن چراغ دیکھو تو جان لینا
کہ ہر پتنگے کے ساتھ میں بھی سلگ چکا ہوں
تم اپنے ہاتھوں سے ان پتنگوں کی خاک دریا میں ڈال دینا
میں خاک بن کر سمندر میں سفر کروں گا
کسی نہ دیکھے ہوئے جزیرے پہ رک کے تمہیں صدائیں دوں گا
سمندروں کے سفر پہ نکلو
تو اس جزیرے پہ کبھی اترنا۔۔!!

امجد اسلام امجد

Agar Bichharna Thahir Giya Hai

Roman Urdu      رومن اردو

Aagr Bichharna Thahir Giya Hai
To Merey Kahwabon Samait
Apni Uddas Aankhien
Bhulla Kay Jao
Ke Jabb Bhi Millna Parey Kissi Se

(Kissi Shanasa K Ajnabi Se)
To Youn Naa Ho….
Tum Chhuppa Naa Pao
Tamam Maazi..!
Tamam Sach Kay Lahoo Mein Tarr
Na-Tamam Wa’aday!
Keh Ajnabi Doston Say Miltey Huey
Khud Apni Uddas Aankhon Mein
Boltey Sach Daffan Karna
Bahot Hee Mushkil Hai
Apney Maazi Kay Sach Pe
“Izhaar e Ma’azratt”
Aor Ma’azratt…..!!!
Aitraf e Jurram O Sazza Say Bhi
Ekk Karra Aaml Hai
Jo Tum Sey Shaid Kabhie Naa Ho Gaa!!

Mohsin Naqvi

Urdu   اردو

اگر بچھڑنا ٹھہر گیا ہے!
تو میرے خوابوں سمیت
اپنی اداس آنکھیں
بُھلا کے جاو
کہ جب بھی ملنا پڑے کسی سے
(کسی شناسا کہ اجنبی سے)
تو یوں نہ ہو۔۔
تم چُھپا نہ پاو
تمام ماضی!
تمام سچ کے لہو میں تر
ناتمام وعدے!
کہ اجنبی دوستوں سے ملتے ہوئے
خود اپنی اداس آنکھوں میں
بولتے سچ کو دفن کرنا
بہت ہی مشکل ہے
اپنے ماضی کے سچ پہ
"اظہارِ معذرت"
اور معذرت۔۔۔!!!
اعترافِ جرم و سزا سے بھی
اک کڑا عمل ہے
جو تم سے شائد کبھی نہ ہوگا!!

محسن نقوی

Aye Sittara e Shab e Zindagi..!

Roman Urdu     رومن اردو

Aye Sittara e Shab e Zindagi..!
Wohi Shaam, Kohor See Shaam!
Phir Terey Naam Ho Ghazal Kahein
Wohi Shaam!
Jiss Ki Raggon Mein Thay

Terie Khawab Aankhon Kay Ratjaggay
Wohi Subha Dhoop Kie Laali!
Terey Aarizon Parr Khillay To
Ragg O Jaan Sey Nazam Kasheeda Ho
Wohi Khushbuon Ka Hajoom Ho
Wohi Rangg Ho, Wohi Roshni
Wohi Sammaton Ka Jaloos Ho
Wohi Aik Pall Teri Deed Ka!
Jo Milley To Ashk Damak Uthein
Wohi Aik Pall Teri Deed Kaa!
Jo Milley To Dard Ko Oat Sey
Sabhi Qaheqahey Se Chhalk Uthein
Sarr e Loh e Shaam e Firraq Phir
Gham e Ishq Mouj e Naveed Ho
Aye Sittara e Shabb e Zindagi!
Idhar Aa Key Jashan Mootabir Ho
Nazar Aa Keh Dhangg Se Eid Ho

Mohsin Naqvi


Urdu    اردو

اے ستارہِ شبِ زندگی!
وہی شام، کُہرسی شام !
پھر تیرے نام ہو تو غزل کہیں
وہی شام !
جس کی رگوں میں تھے
تیری خواب آنکھوں کے رتجگے
وہی صبح دھوپ کی لالی !
تیرے عارضوں پر کھلے تو
رگِ جاں سے نظم کشیدہ ہو
وہی خوشبووں کا ہجوم ہو
وہی رنگ ہو، وہی روشنی
وہی سماعتوں کا جلوس ہو
وہی ایک پل تیری دید کا!
جو ملے تو اشک دمک اُٹھیں
وہی ایک پل تیری دید کا!
جو ملے تو درد کی اوٹ سے
سبھی قہقہے سے چھلک اُٹھیں
سرِلوحِ شامِ فراق پھر
غمِ عشق موجِ نوید ہو
اے ستارہِ شبِ زندگی!
اِدھر آ کہ جشن معتبر ہو
نظر آ کہ ڈھنگ سے عید ہو!

محسن نقوی

Aye Abbarr Tera Jabb Bhi Yahan Se Guzzr Hua Hai


Roman Urdu      رومن اردو

Aye Abbarr Tera Jabb Bhi_e Yahan Se Guzzr Hua Hai
Shararron Sey Jall Kay Khakk Mera_a Nagar Hua Hai

Aye Barisho Tum Jaao Kahein Aor Jaa Kay Barso
Pehley Hee Mera Aangan Ashkon Sey Tarr Hua Hai


Keh Rah e Margg Pey Bhi Yeh Hota Nahin Judda
Gham Hamnasheen Thaa Pehley, Abb Hamsafar Hua Hai

Urdu       اردو

اے ابر تیرا جب بھی یہاں سے گزر ہوا ہے
شراروں سے جل کے خاک میرا نگر ہوا ہے

اے بارشو۔۔۔! تم جاو کہیں اور جا کے برسو
پہلے ہی میرا آنگن اشکوں سے تر ہوا ہے

کہ راہِ مرگ پہ بھی یہ ہوتا نہیں جدا
غم ہمنشیں تھا پہلے اب ہم سفر ہوا ہے

Sunday

Suno Larki Abhi Tum Ishiqq Matt Karna


Roman Urdu     رومن اردو

Sunno Larki
Abhie Tum Ishq Matt Karna
Abhi Guriya Se Khail_o Tum
Tumhari_e Umer Hee Kiya Hai
Faqt Satrah Bars Ki_e Ho
Abhi Maasoom Bachi Ho
Nahin Maaloom Abhie Tum Ko
Keh Jabb Ishq Hota Hai
To Insaan Kitna Rota Hai

Sitaray Toot Jatay Hain
Saharay Chhoot Jatay Hain
Abhie Tum Nay Nahin Daikha
Keh Jab Sathi Bichhartey Hain
To Kitna Dard Milta Hai
Keh Harr Furqatt Kay Mousam Mein
Hazaron Ghamm Ubhartey Hain
Hazaron Zakham Khiltey Hain
Suno Larki………Meri Mano
Parhaie Parr Tawujah Do
Kitaabon Mein Gullabon Ko
Kabhie Bhoolay Se Matt Rakhna
Kitaabein Jab Bhi Kholo Gee
Yeh Kanton Kie Tarah Dil Mein
Chhubhein Gay, Khoon Bahaye Gee
Tumhein Pehron Sattaye Gee
Kissi Ko Khatt Nahin Likhna
Likhai Pakri Jaati Hai
Bardi Ruswai Hoti Hai
Kissi Ko Phone Matt Karna
Wo Awazein Satatein Hain
Meri Nazmein Nahin Parhna
Yeh Mehshar Uthha Deingee
Tumhein Pagal Bana Deingee
Suno Larki……..Meri Mano
Apni Taqdeer Sey Tum Khull Kay Matt Lardna
Abhie Guriya Se Khailo Tum
Abhi Tum Ishiq Matt Karna
Suno Larki….Abhi Tum Ishiqq Matt Karna

Urdu         اردو

سنو لڑکی
ابھی تم عشق مت کرنا
ابھی گڑیا سے کھیلو تم
تمہاری عمر ہی کیا ہے
فقط سترہ برس کی ہو
ابھی معصوم بچی ہو
نہیں معلوم ابھی تم کو
کہ جب بھی عشق ہوتا ہے
تو انسان کتنا روتا ہے
ستارے ٹوٹ جاتے ہیں
سہارے چھوٹ جاتے ہیں
ابھی تم نے نہیں دیکھا
کہ جب ساتھی بچھڑتے ہیں
تو کتنا درد ملتا ہے
کہ ہر فرقت کے موسم میں
ہزاروں غم ابھرتے ہیں
ہزاروں زخم کھِلتے ہیں
سنو لڑکی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میری مانو
پڑھائی پر توجہ دو
کتابوں میں گلابوں کو
کبھی بھولے سے مت رکھنا
کتابیں جب بھی کھولو گی
یہ کانٹوں کی طرح دل میں
چبھیں گے، خون بہائے گی
تمہیں پہروں ستائے گی
کسی کو خط نہیں لکھنا
لکھائی پکڑی جاتی ہے
بڑی رسوائی ہوتی ہے
کسی کو فون مت کرنا
وہ آوازیں بہت ستاتی ہیں
میری نظمیں نہیں پڑھنا
یہ محشر اُٹھا دیں گی
تمہیں پاگل بنا دیں گی
سنو لڑکی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔میری مانو
اپنی تقدیر سے تم کھُل کے مت لڑنا
ابھی گڑیا سے کھیلو تم
ابھی تم عشق مت کرنا
سنو لڑکی۔۔۔ابھی تم عشق مت کرنا

Abhi To Hum Ko Hansna Hai


Roman Urdu      رومن اردو

Abhi To Hum Ko Hansna Hai

Bahot Din Ro Liye Hum Bhi
Bahot Din So Liye Hum Bhi
Magar Abb Jagna Bhi Hai
Bahot See Hasratein Dil Mein
Bahot Say Dard Baydarman
Bahot Se Zakham Taaza Hain
Jinhein Ab Hum Ko Seena Hai

Bahot Din Marr Lia Hum Nay
Magar Abb Humko Jeena Hai
Kissi Say Hai Gilla Hum Ko
Shikayat Bhi Nahin Koi
Bahot Taqdeer Sey Uljhey
Bahot Zanjeer Sey Uljhey
Magar Befaida Sub Kuchh
Dill e Nadan Ko Samjhaya
Issey To Ye Bhi Batlaya
Bahot Hai Zindagi Baaqi
Abhi To Gham Sey Larna Hai
Subha Ko Sham Karna Hai
Abhi_e Se Thakk Gaye Kion
Abhi To Hum Ko Hansna Hai


Urdu     اردو

بہت دن رو لئے ہم بھی
بہت دن سولئے ہم بھی
مگر اب جاگنا بھی ہے
بہت سی حسرتیں دل میں
بہت سے درد بےدرماں
بہت سے زخم تازہ ہیں
جنہیں اب ہم کو سینا ہے
بہت دن مر لیا ہم نے
مگر اب ہم کو جینا ہے
کسی سے ہے گلہ ہم کو
شکائت بھی نہیں کوئی
بہت تقدیر سے اُلجھے
بہت زنجیر سے اُلجھے
مگر بےفائدہ سب کچھ
دلِ ناداں کو سمجھایا
اِسے تو یہ بھی بتلایا
بہت ہے زندگی باقی
ابھی تو غم سے لڑنا ہے
صبح کو شام کرنا ہے
ابھی سے تھک گئے کیوں
ابھی تو ہم کو ہنسنا ہے

Abb Woh Waqt Kahan


Roman Urdu    رومن اردو

Abb Woh Waqt Kahan Jabb Aloohi Jazbon Kay Nazool Hote Thay
Rafaqton Kie Aaghoosh Mein Kantey Bhi Phool Hotey Thay

Kiss Tarah Kay Mousam e Wissal Milley Kahan Kho Gaye Woh Log
Jinnon Khaizy Mein Bhi Ba’ais e Waqar Jinkay Asool Hotey Thay

Qatal Kartey To Poochtey Koi Khawahish Hai To Kaho

Maseehai Kay Parday Mein Tallakh Lehjay Bhi Qabil Qabool Hotey Thay

Ishq Kay Pehlay Parrao Mein Haasil, Lahasil Ki Bahis Chhod
Mein Iss Dour Mein Zinda Hoon Jab Samjhootey Asool Hotey Thay

Tark e Khawahish Pe Aamada Ho, Karo Apni Tamana Poori
Hum Hee Pagal Thay Jo Teri Rah Mein Dhool Hotey Thay

Ainee Shaa

Urdu    اردو

اب وہ وقت کہاں جب الوحی جذبوں کے نزول ہوتے تھے
رفاقتوں کی آغوش میں کانٹے بھی پھول ہوتے تھے

کس طرح کے موسمِ وصل ملے کہاں کھو گئے وہ لوگ
جنوں خیزی میں بھی باعثِ وقار جن کے اصول ہوتے تھے

قتل کرتے تو پوچھتے کوئی خواہش ہے تو کہو
مسیحائی کے پردے میں تلخ لہجے قابلِ قبول ہوتے تھے

عشق کے پہلے پڑاو میں حاصل، لاحاصل کی بحث چھوڑ
میں اس دور میں زندہ ہوں جب سمجھوتے اصول ہوتے تھے

ترکِ خواہش پہ آمادہ ہو کرو اپنی تمنا پوری
ہم ہی پاگل تھے جو تیری راہ میں دھول ہوتے تھے

عینی شاہ

Abb To Lout Aa

Roman Urdu    رومن اردو

Abb To Lout Aa

Bahot See Garam Do_Paherein
Tanha Guzzar Gai Hain
Bahot See Khunnak Ratein
Yaadon Kay Sang Beet Gai Hain
Abb To Lout Aa

Keh Tanhai Ka Zaher Rafta Rafta
Merey Jism Kaa Saraa Lahoo Choos Raha Hai
Tujh Ko Achha Lagney Wala Chehra
Rafta Rafta Tujh Se Rooth Raha Hai
Abb To Lout Aaa


Urdu   اردو

اب تو لوٹ آ

بہت سی گرم دوپہریں
تنہا گزر گئی ہیں۔۔!!
بہت سی خنک راتیں
یادوں کے سنگ بیت گئی ہیں
اب تو لوٹ آ
کہ تنہائی کا زہر رفتہ رفتتہ
میرے جسم کا سارا لہو چوس رہا ہے
تجھ کو اچھا لگنے والا چہرا
رفتہ رفتہ تجھ سے روٹھ رہا ہے
اب تو لوٹ آ

Abb So Jao

Roman Urdu      رومن اردو

Abb So Jao

Kion Raat Ki Rait Pe Bikherey Huey
Taron Kay Kankar Chunti Ho….?
Kion Sanatey Ki Salwat Mein
Lipti Aawazein Sunti Ho………?
Kion Apni Piyasy Palkon Ki Jhallar Mein
Khawab Paroti Ho…? Kion Roti Ho…?

Abb Kon Tumhari Aankhon Mein
Sadion Ki Neind Undaylay Gaa
Abb Kon Tumhari Chahat Ki
Haryali Mein Khull Khailay Gaa
Abb Kon Tumhari Tanhai Kaa
Un-Daikha Dukh Jhailay Gaa
Abb Aisa Hai….!!!
Yeh Raat Musallat Hai Jab Tak
Yeh Shamein Jabb Takk Jalti Hain
Yeh Zakhm Jahan Tak Chubtay Hain
Yeh Sansein Jab Tak Chalti Hain
Tum Apni Soch Kay Jungle Mein
Rah Bhatko Aor Phir Kho Jao…!!
Abb So Jao……!!!

Mohsin Naqvi

Urdu  اردو

کیوں رات کی ریت پہ بکھرے ہوئے
تاروں کے کنکر چنتی ہو۔۔۔۔۔۔۔؟
کیوں سناٹے کی سلوٹ میں
لپٹی آوازیں سنتی ہو۔۔۔۔۔۔۔۔۔؟
کیوں اپنی پیاسی پلکوں کی جھالر میں
خواب پروتی ہو۔۔؟ کیوں روتی ہو۔۔۔۔۔۔۔؟
اب کون تمہاری آنکھوں میں
صدیوں کی نیند انڈیلے گا
اب کون تمہاری چاہت کی
ہریالی میں کُھل کھیلے گا
اب کون تمہاری تنہائی کا
ان دیکھا دکھ جھیلے گا
اب ایسا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔!!!
یہ رات مسلط ہے جب تک
یہ شمعیں جب تک جلتی ہیں
یہ زخم جہاں تک چبھتے ہیں
یہ سانسیں جب تک چلتی ہیں
تم اپنی سوچ کے جنگل میں
راہ بھٹکو اور پھر کھو جاو۔۔۔!!
اب سو جاو۔۔۔۔۔!!!

محسن نقوی

Aanchal Ko Ghoonghat Kar Jana, Abb Ki Baar Jo Aao Tum


Roman Urdu             رومن اردو

Aanchal Ko Ghoonghat Kar Jana, Abb Ki Baar Jo Aao Tum
Maang Mein Khood Sindoor Lagana, Abb Ki Baar Jo Aao Tum

Kaan Ka Baala Chaid Raha Hai Gaal Ko Holey Holey Sey
Iss Ko Mohabbat Se Samjhana, Abb Ki Baar Jo Aao Tum

Daikh Kay Apni Sooni Kallai Maan Mein Hook See Uthti Hai
Choorian Aor Kangan Pehnana, Abb Ki Baar Jo Aao Tum

Natt Khatt Sakhiyan Chaidti Hain Key Sajan Tum Ko Bhool Giya
Daikho Unn Ko Khoob Satana, Abb Ki Baar Jo Aao Tum

Kaga Chhatt Par Roz Hee Bole Aangan Phir Bhi Soona Hai
Daikho Abb Wapas Matt Jana, Abb Ki Baar Jo Aao Tum

Aa Kar Abb To Heer Banna Lo Kab Takk Sapney Daikhon Gee
Hijar Ko Matt Ta’abeer Batana, Abb Ki Baar Jo Aao Tum

Fakhira Batool

Urdu      اردو

آنچل کو گھونگھٹ کر جانا، اب کی بار جو آو تم
مانگ میں خود سندور لگانا، اب کی بار جو آو تم

کان کا بالا چھیڑرہا ہے گال کو ہولے ہولے سے
اس کو محبت سے سمجھانا، اب کی بار جو آو تم

دیکھ کے اپنی سُونی کلائی من میں ہوک سی اٹھتی ہے
چوڑیا ں اور کنگن پہنانا، اب کی بار جو آو تم

نٹ کھٹ سکھیاں چھیڑتی ہیں کہ ساجن تم کو بھول گیا
دیکھو اُن کو خوب ستانا، اب کی بار جو آو تم

کاگا چھت پر روز ہی بولے آنگن پھر بھی سُونا ہے
دیکھو اب واپس مت جانا، اب کی بار جو آو تم

آ کر اب تو ہیر بنا لو کب تک سپنے دیکھوں گی
ہجر کو مت تعبیر بتانا، اب کی بار جو آو تم

فاخرہ بتول

Abb Kay Saal Kuchh Aisa Karna

Roman Urdu      رومن اردو

Abb Kay Saal Kuchh Aisa Karna

Apney Pichlay Bara Mah Kay
Dukh Sukh Kaa Andaza Karna
Basri Yadein Taza Karna
Sada Saa Ekk Kaghaz Lay Kar
Bhooley Bisarey Pall Likh Laina
Phir Iss Beetey Ekk Ekk Pall Kaa
Apney Guzrey Ekk Ekk Kal Kaa

Ekk Ekk More Ahaataa Karna
Sarey Dost Ekhatay Karna
Sari Subhein Hazir Rakhna
Sari Shamein Pass Bullana
Aor Ellawa In Kay Daikho
Sarey Mousam Dhiyan Mein Rakhna
Ekk Ekk Yaad Gumman Mein Rakhna
Phir Mohtat Qayas Lagana
Gar To Khushian Barh Jati Hain
To Phir Tum Ko Meri Taraf Se
Aaney Wala Saal Mubarak
Aor Agar Gham Barh Jain To
Matt Bekaar Takalluf Karna
Daikho Phir Tum Aisa Karna
Meri Sari Khushiyan Tum Le Lena
Mujh Ko Apney Gham Day Daina

Urdu     اردو

اب کے سال کچھ ایسا کرنا
اپنے پچھلے بارہ ماہ کے دکھ سکھ کا اندازہ کرنا
بسری یادیں تازہ کرنا
سادہ سا اک کاغذ لے کر
بھولے بسرے پل لکھ لینا
پھر اس بیتے اک اک پل کا
اپنے گزرے اک اک کل کا
اک اک موڑ احاطہ کرنا
سارے دوست اکٹھے کرنا
ساری صبحیںحاضر رکھنا
ساری شامیں پاس بلانا
اور علاوہ ان کے دیکھو
سارے موسم دھیان میں رکھنا
اک اک یاد گمان میں رکھنا
پھر محتاط قیاس لگانا
گر تو خوشیاں بڑھ جاتی ہیں
تو پھر تم کو میری طرف سے
آنے والا سال مبارک
اور اگر غم بڑھ جائیں تو
مت بیکار تکلف کرنا
دیکھو پھر تم ایسا کرنا
میری ساری خوشیاں تم لے لینا
مجھ کو اپنے غم دے دینا
اب کے سال کچھ  ایسا کرنا

Abb Jaag Sajjan


Roman Urdu     رومن اردو

Abb Jaag Sajjan

Yeh Nain Bahot Bebaak Sajjan
Ekk Din Hona Hai Khaak Sajjan
Yeh Hussan Qayamat Dhaata Hai
Mab_hoot Jahan Reh Jata Hai
Yeh Rog Burra
Yeh Jog Burra

Sanjog Burra
Sabb Kehtey Hain
Iss Ko Log Burra
Yeh Pareet Bahot Bad Zaat Sajjan
Aor Hoti Hai Iss Mein Maat Sajjan
Naa Bhaye Takhat Naa Taaj Dikhey
Bass Pareet Kaa Harr Suraj Dikhey
Tu Matt Karna Yeh Bhool Kabhi
Yahan Miltey Nahin Phool Kabhi
Matt Saye Peechey Bhag Sajjan
Abb Jaag Sajjan

Fakhira Batool

Urdu    اردو

یہ نین بہت بے باک سجن!
اک دن ہونا ہے خاک سجن!
یہ حُسن قیامت ڈھاتا ہے
مبہوت جہاں رہ جاتا ہے
یہ روگ بُرا
یہ جوگ بُرا
سنجوگ بُرا
سب کہتے ہیں
اس کو لوگ بُرا
یہ پریت بہت بد ذات سجن
اور ہوتی ہے اس میں مات سجن
نہ بھائے تخت نہ تاج دِکھے
بس پریت کا ہر سوراج دِکھے
تُو مت کرنا یہ بھول کبھی
یہاں ملتے نہیں ہیں پھول کبھی
مت سائے پیچھے بھاگ سجن
اب جاگ سجن!

فاخرہ بتول

Aap Jaisey Yahan Fun_kar Bahot Miltey Hain

Roman Urdu     رومن اردو

Aap Jaisey Yahan Fun_kar Bahot Miltey Hain
Jaan O Dill Dainey Ko Tiyar Bahot Miltey Hain

Bholi Bhali Kissi Surrat Pe Nah Jana Sahib !
Gull Kay Parday Mein Yahan Khaar Bahot Miltey Hain

Terey Hathon Ki_e Lakeeron Mein Kai More Milley
Aor Badal Janey Kay Aasaar Bahot Miltey Hain


Mana Hum Jaisey Bhi Lakhon Hain Jahan Mein Lekin
Aap Jaisey Bhi To Sarkar Bahot Miltey Hain

Aankh Khul Janey Pe, Ekk Bar Zarra Aan Millo
Khawab Wadi Kay To Uss Paar Bahot Miltey Hain

Zindagi Koi Koi Janey Bhi To Janey Kaisey
Iss Kahani Mein To Kirdaar Bahot Miltey

Addal Milta Hie Nahin Sarey Zamaney Mein Kahein
Mas_nadein Milti Hain, Darbaar Bahot Miltey Hain

Koi Ta’abeer Ko Tasveer Ka Paiker Bhi To Day
Khaab In Aankhon Ko Baikaar Bahot Miltey Hain

Koi Hadd Hai K Jinhein Mill Kay Milley Hain Khud Se
Woh Bhi_e Miltey Hain To Bezaar Bahot Miltey Hain

Aao Ekk Baar Khulley Dill Se, Mohabbat Se Millein
Mustaqil Dill Pey Liye Baar Bahot Milley Hain

Dill Mein Rakh Karr Koi Poojey Gaa To Maanein Gay Batool
Khaali Khooli Hamein Izhaar Bahot Miltey Hain

Fakhira Batool


Urdu        اردو

آپ جیسے یہاں فنکار بہت ملتے ہیں
جان و دل دینے کو تیار بہت ملتے ہیں

بھولی بھالی کسی صورت پہ نہ جانا صاحب !
گل کے پردے میں یہاں خار بہت ملتے ہیں

ترے ہاتھوں کی لکیروں میں کئی موڑ ملے
اور بدل جانے کے آثار بہت ملتے ہیں

مانا ہم جیسےبھی لاکھوں ہیں جہاں میں لیکن
آپ جیسے بھی تو سرکار بہت ملتے ہیں

آنکھ کھل جانے پہ اک ذرا آن ملو
خواب وادی کے تو اس پار بہت ملتے ہیں

زندگی کو کوئی جانے تو جانے کیسے
اس کہانی میں تو کردار بہت ملتے ہیں

عدل ملتا ہی نہیں سارے زمانے میں کہیں
مسندیں ملتی ہیں،  دربار بہت ملتے ہیں

کوئی تعبیر کو تصویر کا پیکر بھی تو دے
خواب ان آنکھوں کو بیکار بہت ملتے ہیں

کوئی حد ہے کہ جنہیں مل کے ملے ہیں خود سے
وہ بھی ملتے ہیں تو بیزار بہت ملتے ہیں

آواک بار کھلے دل سے ، محبت سے ملیں
مستقل دل پہ لئے بار بہت ملتے ہیں

دل میں رکھ کر کوئی پوجے گا تو مانیں گے بتول
خالی خولی ہمیں اظہار بہت ملتے ہیں

فاخرہ بتول

Balla Ki Dilkash Hain Yaar Aankhein

Roman Urdu      رومن اردو

Balla Ki Dilkash Hain Yaar Aankhein
Khizan Ki Rutt Mien Bahar Aankhein

Jo Uth Gaain To Dua Hain Logo
Muhabbaton Ki Pukkar Aankhein


Sababb Hain Merey Sakoon e Dill Kaa
Meri Nazar Kaa Qarar Aankhein

Udasion Mein Khushi Ki Saa’at
Keh Nafraton Mein Hain Piyar Aankhein

Meri Ghazal Ka Hain Yeh Tasawor
Merey Sukhan Kaa Nikhar Aankhein

Wajood In Ka Shiffa Kay Jaisa
Hain Charah Gar Ghamgussar Aankhein

In Hee Nay Hansna Sikhaya Mujh Ko
Tabassami Khush Gawar Aankhein

Uljh Kay Tum Se Suljh Gai Hain
Hui Hain Tum Pe Nisar Aankhein

Nigah Kay Gulshan Mein Bas Gai Hain
Gullon Kay Jaisi Yeh Khaar Aankhein

Bhalla Mein Kaisey Bahek Naa Paon
Mein Bekhudi Hoon Khumaar Aankhein

Nahien Hain Koi Tumharey Jaisi
Mein Daikh Aaya Hazar Aankhein
Tumhari Hassrat Mein Namm Hui Hain
Hain Roee Zar O Qatar Aankhein

Ajjab Hai Saoda Ajeeb Qeemat
Hai Naqad Yeh Dill Udhar Aankhein

Aseer Apna Bana Kay Ahmed
Hui Hain Kaisey Farar Aankhien

Ahmed Hassan

Urdu    اردو

بلا کی دلکش ہیں یار آنکھیں
خزاں کی رت میں بہار آنکھیں

جو اُٹھ گئیں تو دعا ہیں لوگو
محبتوں کی پکار آنکھیں

سبب ہیں میرے سکونِ دل کا
میری نظر کا قرار آنکھیں

اُداسیوں میں خوشی کی ساعت
کہ نفرتوں میں ہیں پیار آنکھیں

میری غزل کا ہیں یہ تصور
میرے سخن کا نکھار آنکھیں

وجود ان کا شفا کے جیسا
ہیں چارہ گر غمگسار آنکھیں

ان ہی نے ہنسنا سکھایا مجھ کو
تمسمی خوشگوار آنکھیں

الجھ کے تم سے سلجھ گئی ہیں
ہوئی ہیں تم پہ نثار آنکھیں

نگاہ کے گلشن میں بس گئی ہیں
گلوں کے جیسی یہ خار آنکھیں

بھلا میں کیسے بہک نہ پاوں
میں بے خودی ہوں خمار آنکھیں

نہیں ہیں کوئی تیرے جیسی
میں دیکھ آیا ہزار آنکھیں

تمہاری حسرت میں نم ہوئی ہیں
ہیں روئی زار و قطار آنکھیں

عجب ہے سودا عجیب قیمت
ہے نقد یہ دل ادھار آنکھیں

اسیر اپنا بنا کے احمد
ہوئی ہیں کیسے فرار آنکھیں

Aankh Aankh Jabb Sehra Phailta Nazar Aaya


Roman Urdu       رومن اردو

Aankh Aankh Jabb Sehra Phailta Nazar Aaya
Zakhm Zakhm Khawabon Ka Silsila Nazar Aaya

Sabz Mousmon Kay Thay Muntazir Darr O Deewar
Raat Bhar Andhera Bhi Jagta Nazar Aaya


Pehley Apney Andar Jo Doob Kar Ubharta Thaa
Aaj Satah Chhoo Karr Hei Sochta Nazar Aaya

Wo K Jiss Ki Aankhon Mein Wehshton Ka Dera Hai
Besadda Jazeeron Mein Dhoondta Nazar Aaya

Chasham O Khab Ko Sajid Jism O Jaan Kehtey Hain
Ghour Se Jo Daikha To Fasla Nazar Aaya

Sajid Hameed

Urdu    اردو

آنکھ آنکھ جب صحرا پھیلتا نظر آیا
زخم زخم خوابوں کا سلسلہ نظر آیا

سبز موسموں کے تھے منتظر در و دیوار
رات بھر اندھیرا بھی جاگتا نظر آیا

پہلے اپنے اندر جو ڈوب کر ابھرتا تھا
آج سطح چھوکر ہی سوچتا نظر آیا

وہ کہ جس کی آنکھوں میں وحشتوں کا ڈیرا ہے
بے صدا جزیروں کو ڈھونڈتا نظر آیا

چشم و خواب کو ساجد جسم و جان کہتے ہیں
غور سے جو دیکھا تو فاصلہ نظر آیا

Aaj Mera Phir Dill Toota Hai

Roman Urdu     رومن اردو

Aaj Mera Phirr Dill Toota Hai
Phir Zakhmon Se Taza Lahoo Nay
Mujh Ko Yeh Ehsaas Diya K
Aatey Jatey Mousam Badlein
Waqt Ka Pahiya Jitna Ghoomey
Rastey Jitna Peechey Chootein

Chaltey Chaltey Sadiyan Guzrein
Dill Mein Yaad Kay Jugnu Uttrein
Suraj Apna Rasta Bhatkay
Chand Kissi Key Saath Chaley Bhi
Koi Chain Ki Sans Milley Bhi
Saari Raat Ekk Deep Jalley Bhi
Rahat Kay Phir Mousam Paltein
Waqt Ki Shakh Se Lamhey Tootein
Hath Se Aas Kay Pathar Chootein
Aankh Se Raat Kay Sapney Roothein
Chand Sitarey Jugnu Rastay
Aik Shaher Ka Rasta Poochein
Deewaron Se Gard Urrey To
Aankh Se Dukh Kay Kankar Niklein
Laikin Saddian Beet Chalein Gee
Chain Ki Dasht Mein Dhoop Milley Gee
Zakhmon Kay Kuch Dagh Bharein Gay
Laikin Waqt Ki Zulmat Daikho
Jabb Bhi Zarra See Rahat Hogee
Achhi Khaasi Qismatt Hogee
Dard Ko Daikhey Muddat Hogee
Hanstey Rehna Aadat Hogee
Laikin Phir Ekk Lamhey Sey Hee
Waqt Ka Pahiyya Thamm Jaye Gaa
Lout Aain Gay Zard Rutton Kay
Woh Aasaib Dobarah Phir Sey
Deewaron Sey Gard Urrey Gee
Zakhmon Se Phir Khoon Nikley Gaa
Phir Woh Sarey Manzar Hoon Gay
Sar Pe Barsey Pathar Hoon Gay
Mein Nay To Bass Yeh Paya Hai
Dard Hee Aakhir Sarmaya Hai
Daikho Gham Phir Lout Aaya Hai
Phir Woh Dasht Ki Zulmat Hai Aor
Dhoop Mussaffat
Aor Mein Tanha
Aaj Ekk Shakhs Kay Chand Lafzon Nay
Be_Maani Se Un Lamhon Nay
Mujh Ko Saddion Paltaya Hai
Mujh Ko Itna Tarpaya Hai
Aaj Mera Phir Dill Toota Hai

Syed Aqeel Shah


Urdu   اردو

آج میرا پھر دل ٹوٹا ہے
آج میرا پھر دل ٹوٹا ہے
پھر زخموں سے تازہ لہو نے
مجھ کو احساس دیا کہ
آتے جاتے موسم بدلیں
وقت کا پہیہ جتنا گھومے
رستے جتنا پیچھے چھوٹیں
چلتے چلتے صدیاں گذریں
دل میں یاد کے جگنو اتریں
سورج اپنا رستہ بھٹکے
چاند کسی کے ساتھ چلے بھی
کوئی چین کی سانس ملے بھی
ساری رات اک دیپ جلے بھی
راحت کے پھر موسم پلٹیں
وقت کی شاخ سے لمحے  ٹوٹیں
ہاتھ سے آس کے پتھر چھوٹیں
آنکھ سے رات کے سپنے روٹھیں
چاند ستارے جگنو رستے
ایک شہر کا رستہ پوچھیں
دیواروں سے گرد اڑے تو
آنکھ سے دُکھ کے کنکر نکلیں
لیکن صدیاں بیت چلیں گی
چین کی دشت میں دھوپ ملے گی
زخموں کے کچھ داغ بھریں گے
لیکن وقت کی ظلمت دیکھو
جب بھی ذرا سی راحت ہوگی
اچھی خاصی قسمت ہوگی
درد کو دیکھے مدت ہوگی
ہنستے رہنا عادت ہوگی
لیکن پھر اک لمحے سے ہی
وقت کا پہیہ تھم جائے گا
لوٹ آئیں گے زرد رتوں کے
وہ آسیب دوبارہ پھر سے
دیواروں سے گرد اُڑے گی
زخموں سے پھر خوں نکلے گا
پھر وہ سارے منظر ہوں گے
سر پہ برسے پتھر ہوں گے
میں نے تو بس یہ پایا ہے
درد ہی آخر سرمایا ہے
دیکھو غم پھر لوٹ آیا ہے
پھر وہ دشت کی ظلمت ہے اور
دُھوپ مسافت
اور میں تنہا
آج اک شخص کے چند لفظوں نے
بے معنی سے اُن لمحوں نے
مجھ کو صدیوں پلٹایا ہے
مجھ کو اتنا تڑپایا ہے
آج میرا پھر دل ٹوٹا ہے

سید عقیل شاہ 

Aaj Mousam Nay Dee Jashan e Mohabbat Ki Khabar

Roman Urdu      رومن اردو

Aaj Mousam Nay Dee Jashan e Mohabbat Ki Khabar
Phoot Kar Roney Lagay Hain Mein Mohabbat Aor Tum

Hum Nay Joonhi_e Karr Liya Mehsoos Manzil Hai Qareeb
Rastey Khooney Lagay Hain Mein Mohabbat Aor Tum


Chand Ki Kirnon Nay Hum Ko Iss Tarah Boosa Diya
Dewta Honey Lagay Hain Mein Mohabbat Aor Tum

Aaj Phirr MehroomioN Ki Dastanein Orh Karr
Khak Mein Soney Lagay Hain Mein Mohabbat Aor TUm

Kho Gaye Andaz Bhi Awaz Bhi Alfaz Bhi
Khamoshi Dhoondney Lagay Hain Mohabbat Mien AOr Tum

Urdu         اردو

آج موسم نے دی جشن محبت کی خبر
پُھوٹ کر رونے لگے ہیں میں محبت اور تم

ہم نے جونہی کرلیا محسوس منزل ہے قریب
راستے کھونے لگے ہیں میں محبت اور تم

چاند کی کرنوں نے ہم کو اس طرح بوسہ دیا
دیوتا ہونے لگے ہیں میں محبت اور تم

آج پھر محرومیوں کی داستانیں اوڑھ کر
خاک میں سونے لگے ہیں میں محبت اور تم

کھوگئے انداز بھی آواز بھی الفاظ بھی
خاموشی ڈھونڈنے لگے ہیں میں محبت اور تم

Aaj Kie Shabb To Kissi Taor Guzzar Jaye Gee!

Roman Urdu   رومن اردو

Aaj Kie Shabb To Kissi Taor Guzzar Jaye Gee!

Raat Gehri Hai Maggar Chand Chamkta Hai Abhie
Merey Mathey Pe Terra Piyar Damkta Hai Abhi_e
Meri Sanson Mein Tera  Lams Mehkta Hai Abhi_e
Mere Seeney Mien Tera Naam Dharkta Hai Abhi
Zeesat Karney Ko Merey Pass Bahot Kuchh Hai Abhi


Teri_e Awaz Ka Jadu Hai Abhi Mere Liye
Terey Malboos Ki Khushbu Hai Abhi Mere Liye
Teri Banhein, Tera Pehloo Hai Abhi Mere Liye
Sabb Se Barh Karr, Meri Jaan Tu Hai Abhi Mere Liye
Zeesat Karney Ko Merey Pass Bahot Kuchh Hai Abhi
Aaj Ki Shab To Kissi Taor Guzar Jaye Gee

Aaj Kay Baad Magar Rang e Wafa Kiya Hoga
Ishq Hairan Hai Sarr e Shaher e Sabba Kiya Hoga
Mere Qaatil! Tera Andaz e Jaffa Kiya Hoga
Aaj Ki Shab To Bahot Kuchh Hai Magar Kal Kay Liye
Aik Andesha, Benaam Hai Aor Kuchh Bhi Nahin
Daikhna Yeh Hai Keh Kall Tujh Se Mullaqat Kay Baad
Rang e Umeed Khilley Gaa Keh Bikharr Jaye Ga
Waqt Parwaz Karey Gaa Keh Thehr Jaye Gaa
Jeet Ho Jaye Gee Yaa Khail Bigar Jaye Gaa
Khawab Ka Shaher Rahey Gaa Ke Ujjar Jaye Gaa

Parveen Shakir

Urdu   اردو

آج کی شب تو کسی طور گزر جائے گی!

رات گہری ہے مگر چاند چمکتا ہے ابھی
میرے ماتھے پہ ترا پیار دمکتا ہے ابھی
میری سانسوں میں ترا لمس مہکتا ہے ابھی
میرے سینے میں ترا نام دھڑکتا ہے ابھی
زیست کرنے کو مرے پاس بہت کچھ ہے ابھی

تیری آواز کا جادو ہے ابھی میرے لئے
تیرے ملبوس کی خوشبو ہے ابھی میرے لئے
تیری بانہیں، تیرا پہلو ہے ابھی میرے لیے
سب سے بڑھ کر، مری جان تُو ہے ابھی میرے لئے
زیست کرنے کو مرے پاس بہت کچھ ہے ابھی
آج کی شب تو کسی طور گزر جائے گی

آج کے بعد مگر رنگِ وفا کیا ہوگا
عشق حیراں ہے سرِشہرِ سبا کیا ہوگا
میرے قاتل ! ترا اندازِ جفا کیا ہوگا!
آج کی شب تو بہت کچھ ہے مگر کل کے لئے
ایک اندیشہ، بےنام ہے اور کچھ بھی نہیں
دیکھنا یہ ہے کہ کل تجھ سے ملاقات کے بعد
رنگِ امید کھلے گا کہ بکھر جائے گا
وقت پرواز کرے گا کہ ٹھہر جائے گا
جیت ہو جائے گی یا کھیل بگڑ جائے گا
خواب کا شہر رہے گا کہ اجُر جائے گا

Aaj Kie Raat Bahot Garam Hawa Chalni Hai


Roman Urdu    رومن اردو

Aaj Kie Raat Bahot Garam Hawa Chalni Hai
Aajj Ki Raat Nah Footpath Pe Neind Aaye Gee
Sabb Uthoo, Mein Bhi Uthoon, Tum Bhi Uthoo
Koi Khirki Kissi Deewar Mein Khull Jayegee


Yeh Zameen Tabb Bhi Nigal Leney Mein Aamadda Thee
Paon Jabb Tooti Shakhoon Sey Ootaray Hum Nay
Inn Makanon Ko Khabar Hai Nah Makeeno Ko Khabar
Unn Dinnon Ki Jo Kuffaon Mein Guzzarey Hum Nay

Haath Dhaltey Gaye Sanchay Mein To Thaktey Kaisey
Naqsh Kaay Baad Naye Naqsh Nikharay Hum Nay
Keh Ye Deewar Bulland Aor Buland Aor Buland
Baam O Darr Aor Zarra Aor Zarra Sanwaray Hum Nay

Aandhiyan Tod Lia Karti Thein Shamon Ki Loovein
Jarr Diye Iss Laye Bijli Kay Sittaray Hum Nay
Ban Giya Qasar To Pehrey Pe Koi Baith Giya
So Rahey Khak Pe Hum Shorish e Taameer Liye

Apni Nass Nass Mein Liye Mehinat e Peeham Ki Thakkan
Band Aankhon Mien Issi Qassar Ki Tasveer Liye
Din Pighalta Hai Issi Tarah Saron Par Abb Takk
Raat Aankhon Mein Khatkhatati Hai Siah Teer Liye

Kaifi Aazmi

Urdu   اردو

آج کی رات بہت گرم ہوا چلنی ہے
آج کی رات نہ فُٹ پاتھ پہ نیند آئے گی
سب اُٹھوں، میں بھی اُٹھوں، تم بھی اُٹھوں
کوئی کھڑکی کسی دیوار میں کُھل جائے گی

یہ زمیں تب بھی نگل لینے میں آمادہ تھی
پاوں جب ٹوٹی شاخوں سے اُتارے ہم نے
اِن مکانوں کو خبر ہے نہ مکینوں کوخبر
اُن دنوں کو جو کفاوں میں گزارے ہم نے

ہاتھ ڈھلتے گئے سانچے میں تو تھکتے کیسے
نقش کے بعد نئے نقش نکھارے ہم نے
کہ یہ دیوار بلند اور بلند اور بلند
بام و در اور ذرا اور ذراسنوارے ہم نے

آندھیاں توڑلیا کرتی تھیں شاموں کی لویں
جڑدیئے اس لیے بجلی کے ستارے ہم نے
بن گیا قصر تو پہرے پہ کوئی بیٹھ گیا
سو رہے خاک پہ ہم شورشِ تعمیر لئے

اپنی نس نس میں لئے محنتِ پیہم کی تھکن
بند آنکھوں میں اسی قصر کی تصویر لئے
دن پگھلتا ہے اسی طرح سروں پر اب تک
رات آنکھوں میں کھٹکھٹاتی ہے سیاہ تیر لئے

Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...