Friday

Dastras Sey Apni Wo Baher Ho Gay


Roman Urdu      رومن اردو

Dastras Se Apni Wo Bahar Ho Gaye
Jab Se Hum Un Ko Muyassar Ho Gaye

Shaher e Khooban Ka Yahi Dastoor Hai
Murr Kay Daikha To Pathar K Ho Gaye
Be Watan Kehlaye Apney Dais Mein
Apney Gharr Mein Reh K Be Gharr Ho Gaye

Sukh Teri Meeras They Tujh Ko Milley
Dukh Hamarey Thay Muqaddar Ho Gaye

Teri Khood Gharzi Se Khud Ko Soch Kar
Aaj Hum Tere Brabar Ho Gaye

Parveen Shakir

Urdu   اردو

دسترس سے اپنی وہ باہر ہوگئے
جب سے ہم اُن کو میسر ہو گئے

شہرِ خوبان کا یہی دستور ہے
مڑکے دیکھا تو پتھر کے ہو گئے

بے وطن کہلائے اپنے دیس میں
اپنے گھر میں رہ کے بے گھر ہو گئے

سکھ تیری میراث تھے تجھ کو ملے
دکھ ہمارے تھے مقدر ہو گئے

تیری خود غرضی سے خود کو سوچ کر
آج ہم تیرے برابر ہو گئے


پروین شاکر

Day Giya Koun Ye Phir Zakham


Roman Urdu      رومن اردو

Day Giya Kon Yeh Phir Zakham e Shanasai Mujhe
Dasht e Ghurbat Mein Bhi Chhorey Gee Na Ruswai Mujhe

Ajnabi Miltey Hain Rahon Mein Bichar Jatey Hain
Qafley Dard K De Jatey Hain Tanhai Mujhey

Umer Bharr Jagti Hain Aankhien Sitarey Gintey
Karni Parti Hai Siah Raton Ki Sehrai Mujhe

Seel e Toofan Kay Bhanwar Se Abhi Nikley Bhi Na They
Kahein Lay Doobey Na Phir Dil Ki Yeh Dariyai Mujhey

Garm Mousam Mein Rakhein Aag Ke Dil Par Phahey
Phoonk Daley Na Kahein Aisi Meesahai Mujhe

Urdu   اردو

دے گیا کون یہ پھر زخمِ شناسائی مجھے
دشتِ غربت میں بھی چھوڑے گی نہ رسوائی مجھے

اجنبی ملتے ہیں راہوں میں بجھڑ جاتے ہیں
قافلے درد کے دے جاتے ہیں تنہائی مجھے

عمر بھر جاگتی ہیں آنکھیں ستارے گنتے
کرنی پڑتی ہے سیاہ راتوں کی صحرائی مجھے

سیلِ طوفاں کے بھنور سے ابھی نکلے بھی نہ تھے
کہیں لے ڈوبے نہ پھر دل کی یہ دریائی مجھے

گرم موسم میں رکھیں آگ کے دل پر پھاہے

پھونک ڈالے نہ کہیں ایسی مسیحائی مجھے

Dil e Bekhabar Tujhe Kia Khabar


Roman Urdu      رومن اردو

Dil e Baykhabar
Tujhey Kiya Khabar Dil e Be Khabar
Dil O Jaan K Rishtey They Kitney Mootabir
Jo Challa Giya Hai Wo Chore Kar
Nahin Abb Koi Tera Chara Gar
Dil e Bekhabar Dil e Bekhabar
Teri Manzlein To Koi Aor Theein
Teri Hasratein Thein Shaid Naa Motaabir
Tu Zamein Ka Koi Khuab Thaa

Usskay Sameny Thaa Roshan Aasman
Tabhi To Hatt’ta Raha Hai Gard e Safar
Dil e Be Khabar
Thaa Andheron Mein Chhupa Tera Aashieyan
Chaand Tarey Thay Usskay Shareek e Safar
Phir Kaisey Lout K Leta Wo Teri Khabar
Dil e Be Khabar Nahin Tujhey Koi Khabar
Abb Dhoond Na Ussey Darbadar
Wo Nahin Raha Ab Tera Chara Gar
Dil e Be Khabar Dil e Bekhabar

Dr. Najma Shaheen Khosa

Urdu   اردو

دلِ بے خبر
تجھے کیا خبر دلِ بے خبر
دل و جان کے رشتے تھے کتنے معتبر
جو چلا گیا ہے وہ چھوڑ کر
نہیں اب کوئی تیرا چارہ گر
دل بے خبر دل بے خبر
تیری منزلیں تو کوئی اور تھیں
تیری حسرتیں تھیں شائد نا معتبر
تو زمین کا کوئی خواب تھا
اسکے سامنے تھا روشن آسماں
تبھی تو بنتا رہا ہے گردِ سفر
دل بے خبر
تھا اندھیروں میں چھپا تیرا آشیاں
چاند تارے تھے اسکے شریکِ سفر
پھیر کیسے لوٹ کے لیتا وہ تیری خبر
دل بے خبر نہیں تجھے کوئی خبر
اب ڈھونڈ نہ اسے دربدر
وہ نہیں رہا اب تیرا چارہ گر
دلِ بے خبر دلِ بے خبر


ڈاکٹر نجمہ شاہین کھوسہ

Dil e Hazeen Ko Mohabbat Kay Jaal Mein Rakha


Roman Urdu      رومن اردو

Dil e Hazeen Ko Mohabbat K Jaal Mein Rakha
Terri Nazar Nay Hamein Aisi Chaal Mein Rakha

Khuda Ka Shukr Mein Sabit Qadm Rahi Har Damm
Mohabbaton Nay Mujhe Jiss Bhi Haal Mein Rakha

Mein Ehteram e Tamana Mein Sab Se Aagey Thee
Merrey Khuda Nay Mujhey Iss Kamal Mein Rakha

Na Pooch Kaisi Mehk Thee Wafa K Aangan Mein
Bass Aik Phool Thaa Khushbu K Thaal Mein Rakha

Mein Nay Socha Ussey Dikhaon Gee
Rah Giya Zakham Shaal Mein Rakha

Jiss Nay Ibrat Kaha Mohabbat Ko
Uss Nay Mjh Ko Missal Mein Rakha

Urdu   اردو

دل حزیں کو محبت کے جال میں رکھا
تری نظر نے ہمیں ایسی چال میں رکھا

خدا کا شکر میں ثابت قدم رہی ہر دم
محبتوں نے مجھے جس بھی حال میں رکھا

نہ پوچھ کیسی مہک تھی وفا کے آنگن میں
بس ایک پھول تھا خوشبو کے تھال میں رکھا

میں نے سوچا اُسے دکھاؤں گی
رہ گیا زخم شال میں رکھا

جس نے عبرت کہا محبت کو

اُس نے مجھ کو مثال میں رکھا

Dil e Mann Thaher


Roman Urdu      رومن اردو

Dil e Mann Thaher Abhi Door Hian
Sabhi Manzelein Sabhi Rastey
Abhi Naa Tamam Hain Marhallay
Koi Hum Rakaab Hua Nahin
Abhi Khawab Khawab Hua Nahin
Huey Lafz Merey Raqm Kahan
Keh Hunar e Kittab Hua Nahin
Koi Hum Nafs Koi Khoobru

Merri Chasham e Tarr Mein Uttar To Lay
Koi Naqsh Dil Pay Ubhar To Lay
Koi Rang Sham e Wisal Ka
Koi Noor Subeh e Jamal Ka
Rah e Zindagi Sey Guzzar To Lay
Abhi Fitna Gar Hain Shiksta Roo
Wo Masaftein Jo Na Taie Huin
Dil e Mann Thaher K Hawa Challay
To Zameen Ka Rizq Bahal Ho
Koi Ranj Ho Na Malal Ho
Wahan Badshahon Ka Sar Jhukey
Jahan Koi Dast e Sawal Ho

Urdu   اردو

دل من ٹھہر ابھی دور ہیں
سبھی منزلیں سبھی راستے
ابھی نا تمام ہیں مرحلے
کوئی ہم رکاب ہوا نہیں
ابھی خواب خواب ہوا نہیں
ہوئے لفظ میرے رقم کہاں
کہ ہنر کتاب ہوا نہیں
کوئی ہم نفس کوئی خوبرو
مری چشمِ تر میں اتر تو لے
کوئی نقش دل پہ اُبھر تو لے
کوئی رنگ شام وصال کا
کوئی نور صبحِ جمال کا
رہِ زندگی سے گزر تو لے
ابھی فتنہ گر ہیں شکستہ رو
وہ مسافتیں جو نہ طے ہوئیں
دلِ من ٹھہر کہ ہوا چلے
تو زمیں کا رزق بحال ہو
کوئی رنج ہو نہ ملال ہو
وہاں بادشاہوں کا سر جھکے

جہاں کوئی دستِ سوال ہو

Dil Mein Bikhery Huey Jaalon Se


Roman Urdu      رومن اردو

Dil Mein Bikherey Huey Jalon Se Pareshan Na Ho
Mere Guzrey Huey Saalon Se Pareshan Na Ho

Meri Awaz Ki Talkhi Ko Gawara Kar Lay
Mere Gustakh Sawalon Se Pareshan Na Ho
Mein Nay Mana Teri Aankhein Nahin Khulti Hain Magar
Din Niklney Day, Ujalon Se Pareshan Na Ho

Apni Zulfon Mein Utarti Hui Chandi Ko Chhuppa
Mere Bikherey Huey Baalon Se Pareshan Na Ho

Aaye Nai Dost Mein Bhar Poor Hua Hoon Tera
Mere Maazi K Hawalon Se Pareshan Na Ho

Daikh Youn Door Na Ho Mujh Ko Lagga Lay Dil Sey
Tu Merri Rooh Kay Chhalon Se Pareshan Na Ho

Khud Ko Weeran Na Kar Merey Liye, Jaan Merri
Inn Pareshan Khiyalon Se Pareshan Na Ho

Syed Wasi Shah

Urdu   اردو

میرے بکھرے ہوئے جالوں سے پریشان نہ ہو
میرے گزرے ہوئے سالوں سے پریشان نہ ہو

میری آواز کی تلخی کو گوارہ کر لے
میرے گستاخ سوالوں سے پریشان نہ ہو

میں نے مانا تیری آنکھیں نہیں کھلتی ہیں مگر
دن نکلنے دے اجالوں سے پریشان نہ ہو

اپنی زلفوں میں اترتی ہوئی چاندی کو چھپا
میرے بکھرے ہوئے بالوں سے پریشان نہ ہو

اے نئی دوست میں بھر پور ہوا ہوں تیرا
میرے ماضی کے حوالوں سے پریشان نہ ہو

دیکھ یوں دور نہ ہو مجھ کو لگا لے دل سے
تو مری روح کے چھالوں سے پریشان نہ ہو

خود کو ویران نہ کر میرے لئے جان مری
ان پریشان خیالوں سے پریشان نہ ہو


سید وصی شاہ

Thursday

Hamarey Rooth Janey Se


Roman Urdu   رومن اردو

Hamarey Roth Janey Se Hamarey Toot Janey Takk
Batao Sath Do Gay Kiya? Tumhein Gar Hum Pukarein To?
Urdu    اردو

ہمارے روٹھ جانے سے ہمارے ٹوٹ جانے تک
بتاؤ ساتھ دو گے کیا؟ تمہیں گر ہم پکاریں تو؟

Dil Udas Rehta Hai


Roman Urdu      رومن اردو

Dil Udas Rehta Hai
Barishon K Mousam Mein
Zindagi Pighlti Hai
Khahishon K Mousam Mein
Waqt Thaher Jata Hai
Muntazir Nigahon Mein

Janglon K Khatrey Hain
Bastion Ki Rahon Mein
Ho Sakay To Lout Aana
Piyar Ki Panahon Mein
Ishq Ka Ajjara Hai
Dill Ki Shahraon Par!!

Farhat Abbas Shah

Urdu   اردو

دل اداس رہتا ہے
بارشوں کے موسم میں
زندگی پگھلتی ہے
خواہشوں کے موسم میں
وقت ٹھہر جاتا ہے
منتظر نگاہوں میں
جنگلوں کے خطرے ہیں
بستیوں کی راہوں میں
ہو سکے تو لوٹ آنا
پیار کی پناہوں میں
عشق کا اجارہ ہے
دل کی شاہراہوں پر!!


فرحت عباس شاہ

Dil Youn Dharka Keh Pareshan Hua


Roman Urdu      رومن اردو

Dill Youn Dharka Keh Pareshan Hua Ho Jaisey
Koi Bedhiyani Mein Nuqsaan Hua Ho Jaisey

Rukh Badlta Hoon To Shah Ragg Mein Chubhan Hoti Hai
Ishq Bhi Jang Kaa Maidaan Hua Ho Jaise
Jism Youn Lams e Rafaqat Kay Assar Sey Nikkla
Doosrey Dour Kaa Saaman Hua Ho Jaisey

Dill Nay Youn Phir Mere Seeney Mein Faqeeri Rakh Di
Toot Kar Khood Hee Pasheymaan Hua Ho Jaisey

Thaam Kar Hath Mera Aisey Wo Roya Mohsin
Koi Kaafir Sey Muslimaan Hua Ho Jaisey

Urdu   اردو

دل یوں دھڑکا کہ پریشان ہوا ہو جیسے
کوئی بے دھیانی میں نقصان ہوا ہو جیسے

رخ بدلتا ہوں تو شہ رگ میں چبھن ہوتی ہے
عشق بھی جنگ کا میدان ہوا ہو جیسے

جسم یوں لمسِ رفاقت کے اثر سے نکلا
دوسرے دور کا سامان ہوا ہو جیسے

دل نے یوں پھیر میرے سینے میں فقیری رکھ دی
ٹوٹ کر خود ہی پشیمان ہوا ہو جیسے

تھام کر ہاتھ میرا ایسے وہ رویا محسن

کوئی کافر سے مسلمان ہوا ہو جیسے

Din Kuchh Aisey Guzarta Hai Koi


Roman Urdu      رومن اردو

Din Kuchh Aisey Guzaarta Hai Koi
Jaisey Ehsaan Uttarta Hai Koi

Aaina Daikh Kar Tasalli Hui
Hum Ko Iss Gharr Mein Janta Hai Koi

Dil Mein Kuch Yon Sambhalta Hon Gham
Jaisey Zewaar Sambhalta Hai Koi

Pakk Giya Hai Shajar Pey Phall Shaid
Phir Se Pathar Uchhalta Hai Koi

Dair Se Goonjtey Hain Sannatey
Jaisey Hum Ko Pukarta Hai Koi


Urdu   اردو


دن کچھ ایسے گزارتا ہے کوئی
جیسے احسان اُتارتا ہے کوئی

آئینہ دیکھ کر تسلی ہوئی
ہم کو اس گھر میں جانتا ہے کوئی

دل میں کچھ یوں سنبھالتا ہوں غم
جیسے ریور سنبھالتا ہے کوئی

پک گیا ہے شجر پہ پھل شائد
پھر سے پتھر اجھالتا ہے کوئی

دیر سے گونجتے ہیں سناٹے

جیسے ہم کو پکارتا ہے کوئی

Dosron Mein Zindagi Kay Zaiqey Bantey Gaye



Roman Urdu      رومن اردو

Doosron Mein Zindagi K Zaiqey Bantey Gaye
Doston Mein To Faqt Shikway Gilley Bantey Gaye

Pehley To Chheni Gai Aankhon Se Beenai Yahan
Aor Phir Sarey Nagar Mein Aainey Bantey Gaye

Din Chada To Khouf Ki Hrr Simt Deewarein Utheen
Raat Hotey Hee Nagar Mein Ratjaggay Bantey Gaye

Jab Bhi Khushbakhti Se Manzil Key Qareeb Aaye Kabhi
Phir Hamein Ekk More De Kar Fasaley Bantey Gaye

Ekk Safar Darpaish Tha Taptey Huye Sahraon Kaa
Aor Kuchh Pehley Safar Kay Aabley Bantey Gaye

Hashiye Khainchey Gaye Khushion Pe Apni Aor Kabhi
Shaher Ki Har Ekk Galli Mein Sanhey Bantey Gaye

Kabb Mujhey Aosaf Iss K Piyar Ka Hissa Milla
Jo Bhi Lamhey Thay Wo Duniya Kay Liye Bantey Gaye

Aousaf Sheikh


Urdu   اردو


دوسروں میں زندگی کے ذائقے بانٹے گئے
دوستوں میں تو فقط شکوے گلے بانٹے گئے

پہلے تو چھینی گئی آنکھوں سے بینائی یہاں
اور پھر سارے نگر میں آئینے بانٹے گئے

دن چڑھا تو خوف کی ہر سمت دیواریں اٹھیں
رات ہوتے ہی نگر میں رت جگے بانٹے گئے

جب بھی خوش بختی سے منزل کے قریب آئے کبھی
پھر ہمیں اک موڑ دے کر فاصلے بانٹے گئے

اک سفر درپیش تھا تپتے ہوئے صحراؤں کا
اور کچھ پہلے سفر کے آبلے بانٹے گئے

حاشئیے کھینچے گئے خوشیوں پہ اپنی اور کبھی
شہر کی ہر اک گلی میں سانحے بانٹے گئے

کب مجھے اوصاف اس کے پیار کا حصہ ملا
جو بھی لمحے تھے وہ دنیا کے لئے بانٹے گئے


اوصاف شیخ

Tumharey Chehray Par Jo Sajjay Hain


Roman Urdu      رومن اردو

Tumharey Chehrey Par Jo Sajjay Hain
Wo Phool Khushion Kay Younhi Taza Rahein
Abdd Takk
Hayat e Nao Mein Wo Rang Bhar Dein
K Aanewala Har Lamha
Nai Umangon Ka Tarjuman Ho

Nai Baharon Ki Dastan Ho
Wo Dastan Jiss Ko Parh Kr Dil Mein
Mohabbaton Kaa Mussarton Ka Yaqeen Ho Paida
Meri Dua Hai
Tumhari Aankhon K Sarey Sapney
Missal e Suraj Numayan Ho Kr
Tumhari Duniya Jagmagain
Missal e Mehtaab Aor Anjam
Tumhari Hasti Ko Sajain
Yeh Naik Tamanain Tumharey Liye Hain

Urdu   اردو


تمہارے چہرے پر جو سجے ہیں
وہ پھول خوشیوں کے یونہی تازہ رہیں
ابد تک
حیاتِ نو میں وہ رنگ بھر دیں
کہ آنے والا ہر لمحہ
نئی امنگوں کا ترجمان ہو
نئی بہاروں کی داستان ہو
وہ داستان جس کو پڑھ کر دل میں
محبتوں کا مسرتوں کا یقین ہو پیدا
میری دعا ہے
تمہاری آنکھوں کے سارے سپنے
مثال سورج نمایاں ہو کر
تمہاری دنیا جگمگائیں
مثال ماہتاب اور انجم
تمہاری ہستی کو سجائیں

یہ نیک تمنائیں تمہارے لیے ہیں

Dukh Boltey Hain


Roman Urdu      رومن اردو

Dukh Boltey Hain
Jabb Seeney Andar Saans Kay Darya Doltey Hain
Jabb Mousam Sard Hawa Mein
Chup See Gholtey Hain
Jab Aansoo
Palkein Roltey Hain

Jab Sab Aawazein Apney Apney Bistar Pay So Jati Hain
Tabb Ahista Ahista Aankhein Kholtey Hain
Dukh Boltey Hain

Farhat Abbas Shah

Urdu   اردو


دکھ بولتے ہیں

جب سینے اندر سانس کے دریا ڈولتے ہیں
جب موسم سرد ہوا میں
چپ سی گھولتے ہیں
جب آنسو
پلکیں رولتے ہیں
جب سب آوازیں اپنے اپنے بستر پہ سو جاتی ہیں
تب آہستہ آہستہ آنکھیں کھولتے ہیں
دکھ بولتے ہیں


فرحت عباس شاہ

Dukhon Mein Aansuon Ko Sadda Qareeb Paya


Roman Urdu      رومن اردو

Dukhon Mein Aansoun Ko Sadda Qareeb Paya Hm Nay
Younhi To Nahin Inn Ko Apna Mehboob Banaya Hum Nay 
Wo Kehta Thaa Saya Hoon Tera Tere Sath Rahon Ga
Magar Andheron Mein Issey Suraj K Sath Paya Hm Nay

Sapney Hueye Sangsaar Jab Ilzam e Mohabbat Mein
Shareek e Jurm K Hathon Bhi Sang Khaya Hum Nay

Poochtay Hain Shaher K Log Akailey Kion Ghomtey Ho
Badnaam Ho Naa Jaye Iss Liye Weerana Basaya Hum Nay

Khaa Kar Chot Jaffa Ki Jo Girra Wafa Falak Sey
Girr Kar Iss Ki Galli Mein Ahed e Wafa Nibhaya Hum Nay

Wafa Ghulam Nabi Sheikh

Urdu   اردو


دکھوں میں آنسوؤں کو سدا قریب پایا ہم نے
یونہی تو نہیں اِن کو اپنا محبوب بنایا ہم نے

وہ کہتا تھا سایہ ہوں تیرا تیرے ساتھ رہوں گا
مگر اندھیروں میں اسے سورج کے ساتھ پایا ہم نے

سپنے ہوئے سنگسار جب الزامِ محبت میں
شریکِ جرم کے ہاتھوں بھی سنگ کھایا ہم نے

پُوچھتے ہیں شہر کے لوگ اکیلے کیوں گھومتے ہو
بدنام ہو نہ جائے اس لئے ویرانہ بسایا ہم نے

کھا کر چوٹ جفا کی جو گرا وفا فلک سے
گر کر اس کی گلی میں عہد وفا نبھایا ہم نے


وفا غلام نبی شیخ

Wednesday

Dushman Ho Koi Dost Ho Parkha Nahin


Roman Urdu      رومن اردو

Dushman Ho Koi Dost Ho Parkha Nahien Kartey
Hum Khaaknasheen Zarf Ka Souda Nahin Kartey

Ekk Lafz Jo Keh Dein To Wohi Lafz Hai Aakhir
Kat Jaye Zabban Baat Ko Badla Nahin Kartey

Koi  Aa Kay Hamein Zarb Lagga Day To Allag Baat
Hum Khud Kissi Lashkar Ko Bhi Paspa Nahin Kartey

Ekk Zabt e Masafat Hai Zamaney Ki Kadi Dhoop
Ghar Se Binna Chadar Lieye Nikla Nahin Kartey

Jiss Shaher Mein Jana Na Ho Logon Se Sar re Rah
Uss Shaher Ka Rasta Kabhi Poocha Nahin Kartey

Banjar See Zameenon Pay Baristee Nahin Barish
Panchhi Kabhi Uss Khait Mein Uttra Nahin Kartey

Ekk Baar Jahan Dil Ko Laga Lein To Wahan Pe
Phir Sood O Zian Kiya Hai Yeh Daikha Nahin Kartey

Dill Hai To Issey Gard Ka Sehra Nahin Karte
Aankhon Ko Kissi Baat Pay Dariya Nahin Kartey

Ban Jain To Phir Unn Ki Paristish Ki Museeba
Pathar Kabhi Iss Tarah Trasha Nahin Kartey

Aqeel Koi Baat Hai Khamosh See Labb Par
Kuch Lafz To Aisey Hain Jo Likha Nahin Kartey

Syed Aqeel Shah

Urdu   اردو

دشمن ہو کوئی دوست ہو پرکھا نہیں کرتے
ہم خاک نشین طرف کا سودا نہیں کرتے

اک لفظ جو کہہ دیں تو وہی لفظ ہے آخر
کٹ جائے زباں بات کو بدلا نہیں کرتے

کوئی آکے ہمیں ضرب لگا دے تو الگ بات
ہم خود کسی لشکر کو بھی پسپا نہیں کرتے

اک ضبطِ مسافت ہے زمانے کی کڑٰ دھوپ
گھر سے بنا چادر لئے نکلا نہیں کرتے

جس شہر میں جانا نہ ہو لوگوں سے سرِ راہ
اُس شہر کا رستہ کبھی پوچھا نہیں کرتے

بنجر سی زمینوں پہ برستی نہیں بارش
پنچھی کبھی اُس کھیت میں اُترا نہیں کرتے

اک بار جہاں دل کو لگا لیں تو وہاں پہ
پھر سود و زیاں کیا ہے یہ دیکھا نہیں کرتے

دل ہے تو اسے گرد کا صحرا نہیں کرتے
آنکھوں کو کسی بات پہ دریا نہیں کرتے

بن جایئں تو پھر اُن کی پرستش کی مصیبت
پتھر کبھی اس طرح تراشا نہیں کرتے

عقیل کوئی بات ہے خاموش سی لب پر
کچھ لفظ تو ایسے ہیں جو لکھا نہیں کرتے


سید عقیل شاہ
Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...