Friday

اِک ذرا دیکھ



زندگی ھم تِری دہلیز پہ آ بیٹھے ھیں

اِک ذرا دیکھ
کہ ھم نرم مزاجوں کے لیے
کون سی رات ھے جس رات کے آنچل میں ھوا
خواب کو آئینہء خواب میں سر کرتی ھے
کون سا دِن ھے کہ جس دِن کا ظہوُر
حرفِ دِل کے لیے صحرائے تمنا کا سفر کرتا ھے
اِک تِرے لمس کی خاطر ھم نے
خیمہء دِل میں جلائے تِرے 'ھونے' کے چراغ
ھاں مگر کوئی سُراغ
تِری آہٹ، تِری آواز، قدوقامت، خوشبوُ کا سُراغ
اِک ذرا دیکھ! کہاں ھم ھیں کہاں تیرے چراغ

جاں بہ لب ھیں
مگر اِک حرفِ تسلی کے لیے
زندگی ھم تیری دہلیز پہ آ بیٹھے ھیں
ھاتھ میں کاسہء تدبیر لیے
زندگی ھم تِری دہلیز پہ آ بیٹھے ھیں

No comments:

Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...