Friday

کھلا ھے سبھی کے لیےؑ بابِ رحمت

کھلا ھے سبھی کے لیےؑ بابِ رحمت
وہاں کوی رتبہ میں ادنیٰ نہ عالی
کھلا ھے سبھی کے لیےؑ بابِ رحمت

مرادوں سے دامن نہیں کوی خالی
قطاریں لگاے کھڑے ہیں سوالی

مین پہلے پہل جب مدینہ گیا تھا
تو تھی دل کی حالت تڑپ جانے والی

وہ دربار سچ مچ مرے سامنے تھا
ابھی تک تصور تھا جسکا خیالی

میں ایک ہاتھ سے دل سنبھالے ہوے تھا
تو تھی دوسرے ہاتھ میں انکی جالی

دعا کے لیے ہاتھ اٹھتے تو کیسے
نہ یہ ہاتھ خالی نہ وہ ہاتھ خالی

جو پوچھا ھے تم نے کہ میں نذر کرنے
کو کیا لے گیا تھا تو تفصیل سن لو

تھا نعتوں کا ایک ہار ، اشکوں کے موتی
درودوں کا گجرا ، سلاموں کی ڈالی

دھنی اپنی قسمت کا ھے تو وہی ھے
دیارِ نبی جس نے انکھوں سے دیکھا

مقدر ھے سب کا مقدر اسی کا
نگاہ کرم جس پہ آقا نے ڈالی

کھلا ھے سبھی کے لیےؑ بابِ رحمت
وہاں کوی رتبہ میں ادنیٰ نہ عالی
کھلا ھے سبھی کے لیےؑ بابِ رحمت

No comments:

Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...