Friday

درِ نبی پر پڑا رہوں گا پڑے ہی رہنے سے کام ہوگا

درِ نبی پر پڑا رہوں گا پڑے ہی رہنے سے کام ہوگا

کبھی تو قسمت کھلے گی میری کبھی تو میرا سلام ہوگا


خلافِ معشوق کچھ ہوا ہے نہ کوئی عاشق سے کام ہوگا
خدا بھی ہو گا اُدھر ہی اے دِل جدھر وہ عالی مقام ہوگا



کیے ہی جاؤں گا عرضِ مطلب,ملے گا جب تک نہ دل کا مطلب
نہ شامِ مطلب کی صبح ہوگی نہ یہ فسانہ تمام ہو گا

جو دل سے ہے مائلِ پیمبر یہ اُس کی پہچان ہےمقرر
کہ ہر دم اُس بے نوا کے لب پر درود ہو گا سلام ہو گا

اِسی توقع پہ جی رہا ہوں یہی تمنا جِلا رہی ہے
نگاہِ لطف و کرم نہ ہوگی تو مجھ کو جینا حرام ہو گا


No comments:

Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...