Friday

مرے عزيزو ! تمام دکھ ہے


وجود دکھ ہے،
وجود کی يہ نمود دکھ ہے
حيات دکھ ہے،
ممات دکھ ہے
يہ ساری موہوم و بے نشاں کائنات دکھ ہے
شعور کيا ہے ؟
اک التزامِ وجود ہے،
اور وجود کا التزام دکھ ہے
جدائی تو خير آپ دکھ ہے،
ملاپ دکھ ہے
کہ ملنے والے جدائی کی رات ميں مليں ہيں،
يہ رات دکھ ہے
يہ زندہ رہنے کا،
باقی رہنے کا شوق،
يہ اہتمام دکھ ہے
سکوت دکھ ہے،
کہ اس کے کربِ عظيم کو کون سہہ سکا ہے
کلام دکھ ہے،
کہ کون دنيا ميں کہہ سکا ہے جو ماوراے کلام دکھ ہے
يہ ہونا دکھ ہے،
نہ ہونا دکھ ہے،
ثبات دکھ ہے،
دوام دکھ ہے
مرے عزيزو ! تمام دکھ ہے



No comments:

Related Posts Plugin for WordPress, Blogger...